25

ٹی وی اینکر کی کہانی جو اپنے شو کی ریٹنگ بڑھانے کیلئے لوگوں کا قتل کروایا کرتاتھا۔۔۔ ایک حیران کر دینے والی کہانی

برازیل سے تعلق رکھنے والا متنازع ترین ٹی وی اینکر لرزہ خیز الزامات کے حقائق ساتھ لئے قبر میں اتر گیا اور دنیا اس کے مبینہ جرائم پر تاحال بے یقینی کی کیفیت کا شکار ہے۔ریاست ایمازوناس سے تعلق رکھنے والا ویلس سوزا تین دفعہ برازیلین پارلیمنٹ کا رکن رہ چکا تھا

اور سابقہ پولیس افسر بھی تھا۔ وہ اپنے خوفناک ٹی وی شو کی وجہ سے برازیل کی مشہور ترین شخصیات میں سے ایک سمجھا جاتا تھا۔ اس کے ٹی وی شو کی سب سے اہم بات یہ تھی کہ اس میں خوفناک جرائم سے پردہ اٹھایا جاتا تھا اور آئے روز کسی قتل کی تفصیلات بیان کی جاتی تھیں۔ حیران کن بات یہ تھی کہ ویلس کے شو میں درجنوں ایسے قتل دکھائے گئے کہ جن میں جائے واردات پر سب سے پہلے اس کے رپورٹر پہنچے اور ان جرائم کی تمام تر تفصیلات بھی اسی کے شو کے ذریعے دنیا کے سامنے آئیں۔ حکام کو جب اس بات پر شک گزرا کہ ویلس کے ٹی وی شو میں آئے روز قتل کا انکشاف کس طرح ہوتا ہے اور اس کے رپورٹر ہی سب سے پہلے کیوں پہنچتے ہیں تو تحقیقات کا آغاز کیا گیا۔ مقامی حکام کی طرف سے بالآخر یہ حیران کن الزامات سامنے آئے کہ ویلس خود ہی لوگوں کو قتل کرواتا تھا اور پھر اپنے ٹی وی پروگرام کے ذریعے ان جرائم کی تفصیلات دنیا کے سامنے پیش کرتا تھا تاکہ اس کا شو مقبولیت کی انتہاﺅں کو پہنچ جائے۔ پولیس نے ایک سابقہ باڈی گارڈ کو گرفتار کیا ہے جس نے 9 افراد کو قتل کرنے کا اعتراف کیا جبکہ یہ بھی بتایا کہ اس کے جرائم کا کچھ حصہ ویلس کے شو میں بھی براڈ کاسٹ کیا گیا۔ متنازعہ صحافی کو گزشتہ سال اکتوبر میں گرفتار کیا گیا اور اسے ساﺅپالو کے ایک ہسپتال میں پولیس کی نگرانی میں رکھا گیا تھا۔ بظاہر اس کی ہلاکت جگر کی بیماری کی وجہ سے ہوئی ہے لیکن تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس کے پیچھے کوئی اور وجہ بھی ہوسکتی ہے اور اس کا تعلق ویلس کے مبینہ جرائم کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں