33

حکومت کا یکم جولائی سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنےکا فیصلہ

اسلام آباد (نیوزڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے یکم جولائی سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنے کا فیصلہ کرلیا، وزیراعظم نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنے کی منظوری دے دی، جس پر اوگرا نے نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اوگرا نے یکم جولائی سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ردوبدل کی سفارشات پر

مبنی سمری وفاقی حکومت کو پیش کی تھی۔ جس میں مٹی کا تیل 2 روپے 94 پیسے سستا کرنے پٹرول کی قیمت میں صرف 70 پیسے کی کمی جبکہ ہائی سپیڈ ڈیزل میں 2 روپے 30 پیسے کا اضافہ کرنے کی سفارش کی تھی۔ اوگرا نے تیل کی قیمتوں میں اضافے کی سمری وزارت خزانہ کو بھجوائی تھی۔ جس پر وزیراعظم عمران خان نے یکم جولائی سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنے کا فیصلہ کرلیا، وزیراعظم نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنے کی منظوری دے دی، جس پر اوگرا نے نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا ہے۔ دوسری جانب تیل و گیس ریگولیٹری اتھارٹی اوگرا نے اتوار کو گھریلو، کمرشل اور صنعتی شعبوں کے گیس صارفین کے لئے گیس کی قیمت فروخت کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے جو یکم جولائی سے نافذ العمل ہو گا۔ نوٹیفکیشن کے مطابق اوگرا نے گھریلو صارفین کیلئے 0.5کیوبک ہیکٹو میٹرماہانہ گیس استعمال کرنے والے صارفین سے 121روپے فی ایم ایم بی ٹی یو ، ایک کیوبک ہیکٹو میٹر کے صارفین کیلئے 300روپے فی ایم ایم بی ٹی یو، دو کیوبک ہیکٹو میٹر صارفین کے لئے 553روپے فی ایم ایم بی ٹی یو، 3کیوبک ہیکٹو میٹر تک کے

صارفین کے لئے 738روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اور 4کیوبک ہیکٹو میٹر تک اور 4کیوبک ہیکٹو میٹر سے زائد کے صارفین سے باالترتیب 1107روپے اور 1460روپے فی ایم ایم بی ٹی یو قیمتیں مقرر کی ہیں۔ نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ بلنگ کے طریقہ کار پر بھی نظرثانی کی جائے گی تا کہ گھریلو صارفین کو سابقہ ایک سلیب پر فائدہ ہو سکے جس کے لئے کم از کم چارجز 172.58روپے ماہانہ رکھے جا رہے ہیں۔ سرکاری، نیم سرکاری دفاتر، ہسپتال، کلینک، زچہ بچہ مراکز، سرکاری گیسٹ ہائوسز، مسلح افواج کے میس، لنگرز، یونیورسٹیاں، کالج، سکول اور نجی تعلیمی ادارے، یتیم خانے اور دیگر خیراتی اداروں کے علاوہ ہوٹل اور رہائشی کالونیوں جنہیں بلک میٹر کے ذریعے گیس فراہم کی جاتی ہے اوگرا نے ان کے لئے یکساں 780روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کے ساتھ کم از کم چارجز 4680روپے ماہانہ مقرر کر دئیے ہیں۔ کاروباری شعبہ کے لئے اتھارٹی نے گیس صارفین کے لئے یکساں 1283روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کیے ہیں جو تمام رجسٹرڈ کاروباری اداروں جن میں کیفے، بیکریاں، ملک شاپز، ٹی سٹالز، باربر شاپز، لانڈری، ہوٹل، مالز، پیلسز، سینما جیسے تفریحی مقامات

کلب، تھیٹر، نجی دفاتر اور کارپوریٹ فرمیں وغیرہ شامل ہیں۔ ان کے لئے کم از کم چارجز 5ہزار 880.10روپے ماہانہ ہیں، خصوصی کاوباری کیٹیگری میں شامل روٹی والے تندور کے لئے 121روپے فی ایم ای بی ٹی یو رکھی گئی ہے جو کہ 0.5کیوبک ہیکٹو میٹر ماہانہ گیس استعمال کرنے والوں کے لئے ہو گی جبکہ ایک کیوبک ہیکٹو میٹر صارفین کے لئے 300روپے فی ایم ایم بی ٹی یو، 2کیوبک ہیکٹو میٹر استعمال کرنے والوں کے لئے 553روپے ایم ایم بی ٹی یو، 3کیوبک ہیکٹو میٹر تک کے صارفین کے لئے 738فی ایم ایم بی ٹی یو اور 3 کیوبک ہیکٹو میٹر سے زائد استعمال کرنے والوں کے لئے 1283روپے فی ایم ایم بی ٹی یومقرر کیے گئے ہیں اس کیٹیگری کے لئے کم از کم چارجز 172.58روپے ماہانہ ہونگے۔ برف خانوں کے لئے 1283روپے فی ایم ایم بی ٹی یو رکھے گئے ہیں جن کے لئے کم از کم چارجز 5880.10روپے ماہانہ ہونگے۔ عمومی صنعتی شعبہ کے لئے گیس کے نرخ 1081روپے فی ایم ایم بی ٹی یو رکھے گئے ہیںاور تمام صارفین خام مال کی صنعت کو ویلیو ایڈڈ مصنوعات میں تبدیل کرنے میں مصروف عمل ہیں کے لئے استعمال شدہ گیس کے حجم

کے اعتبار سے علیحدہ نرخ تجویز کیے گئے ہیں جس کے کم از کم چارجز 26301.60روپے ماہانہ ہونگے۔ رجسٹرڈ تیار کنندگان یا برآمد کنندگان کے 5صفر شرح ٹیکس کے شعبوں جن میں ٹیکسٹائل، کارپٹ، لیدر، سپورٹس اور سرجیکل آلات کے شعبے شامل ہیں ان کے لئے اتھارٹی نے 786روپے فی ایم ایم بی ٹی یو ریٹ مقرر کیے ہیں۔ ان کے لئے کم از کم چارجز 20232روپے ماہانہ ہونگے۔ کمپریس نیچرل گیس سی این جی کے صارفین کے لئے یکساں نرخ 1283روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کیے گئے ہیں جس کے لئے کم از کم ماہانہ چارجز 33045.60 ہونگے۔ سیمنٹ کے کارخانوں کے یکساں شرح 1277روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کی گئی ہے اس کے کم از کم چارجز 32870روپے ماہانہ ہونگے۔ فرٹیلائزر کمپنیوں کے لئے یکساں شرح 300روپے فی ایم ایم بی ٹی یو رکھی گئی ہے جبکہ فیڈ سٹاک کے لئے گیس استعمال کرنے اور بجلی کی پیداوار کیلئے بطور ایندھن گیس استعمال کرنے، بھاپ اور ہائوسنگ کالونیوں کے استعمال کیلئے پر 1021فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کیے گئے ہیں تاہم اینگرو فرٹیلائزر لمیٹیڈ 0.70ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو ادا کرے

گی۔ فیڈ سٹاک کے لئے گیس استعمال کرنے کیلئے یکساں شرح ہے۔ توانائی کے شعبے میں 824روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کیے گئے ہیں جو واپڈا کے ای ایس سی کے پاور اسٹیشنوں اور بجلی کی کمپنیوں کے لئے رکھے گئے ہیں جن کے لئے کم از کم چارجز 21209.88روپے ماہانہ ہونگے۔ واپڈا کے گیس ٹربائن پاور اسٹیشن نشاط آباد، فیصل آباد کے لئے یکساں ریٹ 824 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو جبکہ فکس چارجز 975روپے ماہانہ ہونگے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں